Top 10 حالات حاضرہ صفحہ اول مذہبی ملی

 ہندوستانی مدارس اسلامیہ کا نظام تعلیم وتربیت

از:- فیاض احمدبرکاتی مصباحی

جنرل سکریٹری ٹیچرس ایسوسی ایشن مدارس عربیہ اکائی بلرامپور

اس وقت پوری دنیا کے مدارس اسلامیہ کا حال یہ ہے کہ ” ایک دھارے میں چلنے کو معیوب سمجھ کر ، پوری قوم کے نفع ونقصانسے بے خبر ، اپنے محدود وسائل کا استعمال ، بزعم خود اسلام کے مرکز ، دین کے سب سے بڑے سچے داعی اور مسلمانوں کےسب سے بڑے مسیحا کے طور پر الگ الگ پگڈنڈیوں پر اپنی گرتی پڑتی چال چل رہے ہیں ۔نہ کتابیں ، نہ لائبریری ، نہ سلیقے کےاساتذہ ، نہ با ہوش طلبہ ، اگر ان کی دنیا میں چلے جائیں تو یہی احساس ہوگا کہ یا تو یہ لوگ اس زعم میں مبتلاہیں کہ ” ان کی طرف کوئیوحی آئے گی اور یہ لوگ بغیر کتاب کے ساری باتیں جان جائیں گے ، یا اچانک کوئی معجزہ رونماہوگا اور ساری دنیا اپنا علمی مزاجچھوڑ کر ان کے فرسودہ نظام تعلیم کی گود میں آگرے گی ” ۔جس قوم پر تین سو سال سے ذہنی ، فکری اور عملی غلامی مسلط ہے اسقوم کے رہنماؤں  کو یہ بھی پتہ نہیں ہے کہ آخروہ اب تک  کس جرم کی سزا بھگت رہے ہیں ؟ ۔ جب بھی کوئی نظام تعلیم میںتبدیلی کی بات کرتاہے تو بیک وقت پورے ملک کے ہر مسالک کے ذمہ دار ایک ہی سر میں ایک ہی جواب دیتے ہیں کہ ” ہم تو دینیتعلیم کے ذمہ دار ہیں ، ہم اسلام کی تعلیمات کے مبلغ ہیں ، اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی باتوں کے امین ہیں ” اس کے جواب میں کوئی ان سے یہ نہیں پوچھتا کہ ” کئی صدیوں سے آپ نے اپنے مزاج کا اوڑھنا بچھونا فلسفہ قدیمہ کو بنارکھاہےاس سے دین کی کون سی تعلیم جڑی ہے ۔ ممکن ہے یونانی فلسفے کے  خوگر یہ کہیں کہ ” دین کی تعلیم کا سمجھنا اس فلسفے کے سمجھنےپر موقوف ہے اس لیے اس کو اس دینی تعلیم کا جزء لاینفک بنائے رکھاگیا ہے ” ارے صاحب ! جس دین کی تعلیم کو خدا نے اتناآسان بنایا تھا کہ ادنی سے ادنی درجے کا اعرابی سمجھ جاتاتھا اس دین کی تعلیم کو آپ نے یونانی فلسفے کی موشگافیوں کے تکیے کا سہارادےدیاہے ۔ یہ ایک ضمنی بات تھی جو آگئی ۔اصل مقصد یہ ہے کہ گذشتہ تین سو سالوں سے یہ قوم غلامی کی زنجیروں میں  جکڑیہوئی ہے کیا ہمارا یہی نظام تعلیم ہماری پوری قوم کی نیاپار لگائے گا یا ہمیں کچھ سوچنا ہوگا اور اگر سوچنے اور سمجھنے کے بھی روادارنہیں ہیں تو دین کے نام پر چلنے والے ان اداروں کو بند کرکے ” خدا سے کسی تعلیمی ابابیلوں کے بھیجنے کی دعاکرنی چاہیے ” ۔ایکانگریز مؤرخ لکھتاہے کہ ” پچھلی ڈیڑھ صدی کے اندر مسلمانوں کے نوے سے زیادہ ممالک نے غیر مسلم عیسائی اور بدیسیوں کیغلامی قبول کی ” ان بیانوے ممالک کی تاریخ کا جب میں نے مطالعہ کیا تو میری حیرت کی انتہانہ رہی کہ ” سارے ممالک میںمسلمانوں نے  پورے جوش اور جذبہ ایمانی کے ساتھ باہری قوتوں کا مقابلہ کیا لیکن اندرونی سازش اور قدیم نظام تعلیم کی وجہ سےجدید اسلحے نہ ہونے کی بنیاد پر  ہر جگہ غلامی قبول کرنی پڑی ” ۔ لیکن ہمارے اکابرین کا ایک طبقہ آج بھی اسی تعلیم کے بوتل سےکسی مسیحاکے نکلنے کا منتظر ہے ۔ یا یہ کہ ” ہماری عقل اب مفلوج ہوچکی ہے ، قوم کے ماضی سے نہ کوئی تعلق ہے ، نہ اپنی غلطیوںسے کچھ سیکھنے کا جذبہ ہے اور نہ ہی مستقبل سازی کی کوئی پلاننگ ۔مجھے اپنے ایک دوست کی ایک بات ہمیشہ یاد آتی ہے کہ ” مسلمان ابھی کم سے کم ڈیڑھ سو سال دنیاوی منظر نامے سے غائب رہیں گے “ مسلمانوں کی ذہنی پستی ، اخلاقی گراوٹ ،  دین سےدوری ، معاشی تباہی ، نوجوانوں کا فکری الحاد دیکھتے ہوئے ایسا لگتا ہے کہ میرے مفکر دوست کی پیشین گوئی صحیح ثابت ہوگی ۔

             “مدارس اسلامیہ کی بالکلیہ زبوں حالی “

اس طرح کے موضوعات پر قلم اٹھانے کا مطلب ہے اپنا سر اوکھلی میں ڈالنا ، اپنے بھی ناراض بے گانے کی ناخوشی کے ساتھمفت میں گالی گلوج بھی ، لیکن مرض چاہے جتنا بڑا اور پوشیدہ ہو اسے مرض ہی کہنا چاہیے مرض کو صحت کی علامت بنانا عقلی خودکشی ہے ۔ جس طرح اس میں کوئی دو رائے نہیں کہ ” ہندوستانی مسلم اسکالرزنے مسلمانوں کے دبے کچلے افراد کو تعلیم سےآراستہ کیا اور انہیں بلندی تک پہونچانے کی کوشش کی اسی طرح اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ مخدوش فکروعمل اور سہل پسندیکی وجہ سے اسلام مسلمانوں میں ہی غیر متعارف اور متمول گھرانوں کی پہونچ سے باہر ہوگیا ۔ یا یوں کہہ لیں کہ پچھلی قوموں کیطرح ہم نے بھی اسلام کا دومعیار بناڈالا ” ۔ ان سب کی اصل وجہ یہی ہے کہ ہم اسلام کو اس کی اصل روحانیت کے ساتھ دنیاکے سامنے پیش کرنے سے قاصر رہے ہیں ۔ جس کو جس قدر اسلام سے حصہ ملا وہ اس کو اپنے دامن میں سمیٹے دنیا کی تلاش میں نکلپڑا ۔دین کے بدلے جس قدر دنیا حاصل ہوئی اسی کو سب کچھ سمجھ لیا گیا ۔ مالداروں کے لیے اسلام کے علم برداروں نے نرمرویہ اختیار کیا تو نچلے طبقے پر اسے مشکل بناکر پیش کیا جس کے نتیجے میں اس وقت صورت حال یہ ہے کہ 80/ فی صد مسلمان اسلامیتعلیمات سے بے بہرہ ہیں ۔ بیس فی صد کو اگر کچھ معلوم بھی ہے تو وہ اس کی  روحانیت سے بے خبر ہیں ۔ اس میں مدارساسلامیہ اور اس کے ذمہ داران نے کیسا کردار ادا کیا ہے اس کو اس طور پر سمجھ سکتے ہیں کہ” ملک کے بہت سے علاقے میںاوباش اور عیاش طبیعت افراد نے دین کے نام پر ادارے کھولے ، کسی عالم کو رکھ کر کام کرایا اور خود کو دین کے اوپر تصور کرناشروع کردیا ۔ جن کی حماقت کی وجہ سے نہ دین اپنی عزت بچا سکا اور نہ ہی علماء کی معیشت ، عزت کچھ محفوظ رہ سکی “۔ جسے کچھسمجھ میں نہیں آیا کہ کیا کرے کیا نہ کرے اس نے کوئی دینی ادارہ کھول لیا ۔  ۔۔۔۔۔۔۔ اب مدرسوں کا حال دیکھئے ! ہندوستانکے کسی بھی مدرسے میں آپ چلے جائیں آپ کو جو کچھ نظر آئے گا اسے چند لفظوں میں بیان کرسکتے ہیں ۔ ایک خستہ حال عمارتجس کو انسانی ذوق سے دور کا بھی واسطہ نہیں ۔ عمارت کے اندر کچھ چھوٹے بڑے کمرے ، کچھ لکڑی کی  چھوٹی بڑی تپائی ، انہی کمروں میں بچوں کے بکسے ، پیٹی ، اٹیچی اور بیگ ، کمرے میں ادھر ادھر بکھرے ہوئے کپڑے ۔ قرآن کے کچھ نسخے ، کچھ بڑیاور چھوٹی سائز کی کتابیں ۔ ان ہی کمروں میں طلبہ کا سونا بھی اور پڑھنا بھی ، وہی ریڈنگ روم اور وہی کلاس روم ۔ اب کچھجگہوں پر جزوی تبدیلی آرہی ہے ۔ کھانے کا ایسا انتظام کہ اگر روزانہ وہی کھانا جانور کو بھی دیا جائے تو جانور بھی منہ پھیر لیں ۔لیکن دین کے ان ٹھیکداروں کے نزدیک ایسے کھانے کے حق دار صرف طلبہ ہیں ۔ مدرسے کے چندے سے اکثر نظما کا گھر چلتا ہے۔ اچھے مکانات بنتے ہیں اور بہترین گاڑیاں لی جاتی ہیں لیکن دین کی تعلیم حاصل کرنے کے نام پر اپنا مستقبل ان درد مندوں کےہاتھوں بربادکرنے والے بچوں کی قسمت میں بس وہی  “ہاف پلیٹ دال اور ادھ کچلے چاول ” ۔اگر کچھ بول دیں تو جواب آتا ہےفری میں کیا کیا دیں ؟ لگتا ہے اپنے گھرکا دیتے ہیں ؟ پوری دنیا تعلیم کے نام پر فیس لیتی ہے تو یہ لوگ کوئی فیس کیوں نہیں وصولکرتے ؟ مدارس کے ذمہ داران اپنے طرزتعلیم کو موڈیفائی کیوں نہیں کرتے اور کیوں دین کی تعلیم کا معیار اتنا بلند نہیں کرتے کہ ہرشخص اس کی طرف پیش قدمی کرے ۔ تعلیم دینے کے لیے سب سے سستے اساتذہ وہ بھی جی حضوری جن کی عادت ثانیہ ہو  ، پانچسے سات ہزار میں چوبیس گھنٹے کی ڈیوٹی کوئی دہاڑی مزدور بھی نہیں لگاتا لیکن مدارس کے اساتذہ دس ہزار سے زائد کا  مطالبہ نہیںکرسکتے ۔اسی دس ہزار میں کھانا پینا ، کرایہ ، بچوں کی پڑھائی لکھائی سب کچھ ۔جان بوجھ کر غلامی کرانا اور ذہنی استحصال کرنا غالبااس کے علاوہ اور کوئی مقصد نہیں ۔

                        “نظام تعلیم یانظام ڈھکوسلہ بازی “

مدارس اسلامیہ کا نظام تعلیم یہ ہے “کوئی مستقل نصاب نہیں ( اکثر مدارس کو دیکھتے ہوئے ) ، دوسو، پانچ سو سال پہلے لکھی جانےوالی عربی فارسی کی چند کتابیں ،اس کے بھی چند اوراق جو پورے سال میں مشکل سے پڑھائے جاتے ہیں ، میزان منشعب اورنحومیر جیسی ابتدائی کتابیں پورے سال میں ختم نہیں ہوتیں ، دس سال یا  پانچ سال پڑھنے کے بعد بھی ننانوے فیصد طلبہ عربیفارسی تو چھوڑئیے اردو کی سوجھ بوجھ کے لائق بھی نہیں ہوتے ۔ دوسری طرف دوسال میں عربی زبان وادب پر مہارت ہوجاتیہے ۔ ہندوستان میں کئی ایسے ادارے آر ایس ایس کے بینر تلے چلتے ہیں جس میں عربی زبان وادب کی تعلیم دلاکر طلبہ کو مضبوطمعاش سے جوڑ دیا جاتا ہے ۔ لاکھوں کا چندہ برباد کرکے اگر اپنے بچوں کو کسی لائق نہ بناسکیں تو اپنا تعلیمی ادارہ بند کردینا چاہیے ۔ہمارے ملک میں ہزاروں ایسے مدارس ہیں جو پچاس سال سے اپنی خدمات پیش کررہے ہیں لیکن آج تک ایک بھی ایسا پروڈکٹنہیں پیش کرسکے جس پر مسلم سماج کو فخر ہو ۔  اکیڈمک اور اسکولنگ سسٹم کا جال بچھا ہے پورے ملک میں کسی بھی نئے طرزتعلیم کو اپنا کر ہم قوم کے بہتر مستقبل میں اپنا کردار پیش کرسکتے تھے لیکن ہمیں تو اپنی ذات سے مطلب ہے قوم کیا ہے اور قومکی رہنمائی کیا ہے جانے ہماری بلا ۔ ان مدارس کے ذمہ داران اپنے بچوں کے لیے کسی اچھے اسکول کا سہارا لیتے ہیں لیکن ساریقوم کی بھلائی کے لیے ایک قدم بڑھانے کی ہمت نہیں رکھتے ۔ اگر کوئی ان راستوں کی  طرف  جھانک بھی لے تو قیامت سے کممصیبت نہیں آتی ہے ۔ابھی گزشتہ ہفتہ ہندوستان کے مشہور اسلامی اسکالر اور قوم وملت کے لیے بے لوث خدمات پیش کرنےوالا مرد درویش پروفیسر اختر الواسع نے مدارس اور اہل مدارس کی سادگی پر گفتگو کی ، پروفیسر واسع صاحب مدارس کے طلبہ کے لیےخدا کی ایک نعمت ہیں اس کا احساس اس وقت ہوگا جب یونیورسٹی کی دنیا میں مدارس کے طلبہ کو کوئی اخترالواسع نہیں ملے گا ۔ہندوستان کی چند گنی چنی یونیورسٹیز میں ملک بھر کے درجن بھر مدارس کو الحاق یا معادلہ حاصل ہے ۔لیکن اس خوش اسلوبی کےساتھ کہ جو بھی سنیں اپنا سر پیٹ لے ۔ ایک ہی مدرسے کی ایک ہی سند کہیں انٹر کے مساوی ہے تو کہیں بی اے کے مساوی ۔ایک مدرسے کو بی اے کے مساوی ماناگیا ہے تو دوسرے کو ایم اے کے مساوی ۔ سب سے مضحکہ خیز۔

Related posts

کبھی اے نوجوان مسلم تدبر بھی کیا تونے؟

Hamari Aawaz Urdu

نعت: کسے تیری رحمت سے نسبت نہیں ہے

Hamari Aawaz Urdu

نظم: حج سے محرومی پر عاشقوں کی تڑپ

Hamari Aawaz Urdu

ایک تبصرہ چھوڑیں