تازہ ترین خبر

شہزادۂ شارح بخاری ڈاکٹر محب الحق قادری کا وصال پر ملال

 ڈاکٹر صاحب عالم ربانی, بلند اخلاق اور دینی و ملی قائد تھے. مبارک حسین مصباحی
مبارک پور اعظم گڑھ (نامہ نگار) مولانا ڈاکٹر محب الحق قادری اعظمی علیہ الرحمہ کا وصال پر ملال ہو گیا ، یہ خبر سنتے ہی ہم نے کلمات استرجاع دہراے اور آپ علیہ الرحمہ کی روح پرفتوح کو ایصال ثواب کیا ،آپ شارح بخاری علامہ مفتی محمد شریف الحق امجدی سابق صدر شعبہ افتاجامعہ اشرفیہ مبارک پور کے فرزند اکبر تھے. ڈاکٹر علیہ الرحمہ نے با ضابطہ دارالعلوم انوار القرآن بلرامپور وغیرہ مدارس میں درس نظامی کی تعلیم حاصل کی ، اس کے بعد علی گڑھ مسلم یونیورسٹی علی گڑھ سے بی یو ایم ایس کر نے کے بعد سب سے پہلے جہانگیر گنج امبیڈکرنگر میں ڈسپنسری کھولی پھر بعد میں اپنے وطن گھوسی ضلع مئو میں ہاسپٹل قائم کیا اور اب تک کامیاب چلتا رہا مذکورہ خیالات کا اظہار الجامعۃ الاشرفیہ مبارک پور کے استاذ مفکر اسلام مولانا مبارک حسین مصباحی نے اپنے تعزیتی پیغام میں کیا.
مولانا نے مزید کہا کہ ڈاکٹر مرحوم باصلاحیت, حالات پر نگاہ رکھنے والے قلم کار اور عزم و حوصلے کے ساتھ بولنے والے خطیب بھی تھے. آپ کی نظر دینی نزاکتوں پر بھی رہتی تھی اور پیس پارٹی کے ذمہ دار لیڈر بھی تھے. ان سب سے اہم بات یہ ہے کہ آپ جیدعالم اور شہزادۂ شارح بخاری ہونے کی وجہ سے علما اور مشائخ میں خاص متعارف تھے. آپ پابند صوم و صلوۃ, بلند اخلاق اور با ہم محبت رکھنے والی شخصیتوں میں سے تھے, انھونے کہا کہ ڈاکٹر مرحوم کورونا وائرس کی زد میں آ گئے تھے. اسی دوران انھوں نے داعی اجل کو لبیک کہتے ہوئے 29 جولای قریب 10,بے دن اپنے خالق حقیقی سے جاملے. نماز جنازہ بعد نماز ظہر آپ کے برادر صغیرحضرت مولانا حافظ حمید الحق برکاتی مصپاحی کی اقتدا میں ادا کی گئی جس میں کافی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی. بہت ہی غم و اندوہ کے ماحول میں محلہ کریم الدین پور کے بگہی قبرستان میں ان کی تدفین عمل میں آئی.پسماندگان میں اہلیہ سمیت ایک فرزند ارجمند اور پانچ بیٹیاں ہیں.آپ کے چاربھائی ہیں. ماسٹر وحید الحق برکاتی مولانا حمید الحق برکاتی مصباحی آور مولانا ظہیر الحق مصباحی اور دیگر اعز و اقارب اللہ تعالی کی بارگاہ میں دعا کرتے ہیں کہ وہ سب کو کو صبر و شکر کی توفیق عطا فرمائے اور مولانا ڈاکٹر محب الحق قادری علیہ الرحمہ کو اپنے خصوصی فضل و کرم سے جنت الفردوس میں بلند ترین مقام عطا فرمائے آمین ،آمین.
تعزیت پیش کرنے والوں میں نبیرۂ حافظ ملت مولانا محمد نعیم الدین عزیزی ،مولانا اختر کمال قادری مولانا ازہر القادری، مولانا ساجد علی مصباحی, مولانا دستگیر عالم مصباحی,مولانا مفتی مبشررضا ازہر مصباحی،مولانا صابر رضا رہبر مصباحی مولانا گلزار احمد مصباحی, ماسٹر فیاض احمد عزیزی، محمد ادریس علی، سفر احمد اعظمی اور ماسٹر انوار احمد شریفی سمیت کافی تعداد میں لوگ شامل ہیں.

Related posts

کیسے منائیں عرس تاج الشریعہ……. ؟

Hamari Aawaz Urdu

بنگلور میں تشدد اور بد امنِی کا ذمہ دار کون

Hamari Aawaz Urdu

ڈاکٹر ذاکر نائیک کے لیے اگر ڈھنگ سے آواز اٹھائی گئی ہوتی تو آج دلال میڈیا، مولانا سعد اور خواجہ معین الدین چشتی کے بارے میں یوں منہ نہ کھولتا: کمال الدین سنابلی

Hamari Aawaz Urdu

ایک تبصرہ چھوڑیں